نازاں ہیں وہ کہ شَاہ کے ، دربار سے نہیں اُترے

Poet: اخلاق احمد خان
By: Akhlaq Ahmed Khan, Karachi

نازاں ہیں وہ کہ شَاہ کے ، دربار سے نہیں اُترے
ہمیں بھی فخر ہے کہ اپنے ، معیار سے نہیں اُترے

دوستوں نے ساتھ رہ کر کی تھیں سَازشیں
یونہی تو ہم نگاہِ ، یار سے نہیں اُترے

عشق وہ زہرِ قاتل ہے جس کے گھونٹ
جگر میں کبھی بھی ، قرار سے نہیں اُترے

وہ وادی خاکستر ہو چلی مگر حمایت کے اشتہار
اب تلک میرے شہر کی ، دیوار سے نہیں اُترے

جو کہتے تھے بغاوت ہو ، تو اقتدار چھوڑ دوں
وہ سرکار ابھی تک تو ، سرکار سے نہیں اُترے

اخلاق مسندِ شاہی میں وہ حَلاوت وہ نَشہ ہے
جو براجمان ہوۓ اس پر ، پیار سے نہیں اُترے

Rate it:
31 Oct, 2019

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Akhlaq Ahmed Khan
Visit 111 Other Poetries by Akhlaq Ahmed Khan »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City