ننھی کلی

Poet: KASH
By: Syed Kashif Ali, shahdad pur

اک کچھی کلی جو کھل سی گئی
مخمور ہوا میں جھول گئی
عجب نرالہ رنگ تھا اس کا
دیوانا بناسب گلشن اس کا
وہ ننھی کلی جو پھوٹ گئی تھی
ہر سوں خوشیاں بانٹ رہی تھی
پھر یوں ہوا اک بنھورا اس پر
اپنی آنکھ جما بیٹھا
وہ پگلی جو نادان بہت تھی
ہر غم سے انجان بہت تھی
وہ اس کے ساتھ ہو چلی۔
رنگیں نظارے دیکھائے تھے
ہر سوں پیارکے دیپ جلائے تھے
اک الگ ہی دنیا دکھلائی تھی
پھر شام ڈھلی
پھرشام ڈھلی اور رات کے جگنو آئے جب
وہ بھنور جانے کدھر گیا
اور ننھی کلی مرجھا سی گئی
اک رات کا جگنو پاس تو تھا
جو دیکھ کر اس کوجیتا تھا
ہر پل اس پرمرتا تھا
اک آس لئے ہی بیٹھا تھا
اے کاش کہ پھر سے کھل جائے
وہ ننھی پھر روشن ہو جائے۔

Rate it:
28 Dec, 2014

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: Syed Kashif Ali
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City