نور ہی نور

Poet: درخشندہ
By: Darakhshanda, Guangxi

تو نور علی ا نور تو نور ہی نور تو نور ہی نور
جلوہ دیکھوں تیرا وہ بینائ کہاں سے لاؤں ؟

ڈھونڈوں میں تجھ کو گر مل بھی جاۓ تو
نگاہوں میں اپنی میں وہ تاب کہاں سے لاؤں؟

تیرے رو برو میں قدموں پے اپنے
میں خود میں وہ دم کہاں سے لاؤں؟

خاک ہو جاؤں جل کر میں راکھ ہو جاؤں
اب تو ہی بتا میں وہ تاب کہاں سےلاؤں؟

تیرا کُن فیَکُن میں مٹی کا ڈھیر ہو جاؤں
پھر اپنی میں وہ جان کہاں سے لاؤں؟

نہ خاک میری نہ آب میرا نہ یہ تاب میری
پھر تو ہی بتا میں وہ خاک کہاں سے لاؤں؟

گستاخی پے جھکا یہ سر ندامت سے میرا
اب سر اٹھانے کی میں وہ تاب کہاں سے لاؤں؟

 

Rate it:
06 Nov, 2020

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Darakhshanda
Penning my thoughts on life through poetic expression. All praise is for God who blessed me the ability to write.

.. View More
Visit 93 Other Poetries by Darakhshanda »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City