نہ علاج اس کا نہ کوٸی ، دواٸی

Poet: اخلاق احمد خان
By: Akhlaq Ahmed Khan, Karachi

نہ علاج اس کا نہ کوٸی ، دواٸی
کرونا ہے یارو وہ مرضِ ، وباٸی

ستمِ جہاں دیکھ کر ہوتا ہے گماں یہ
ناراضگی خدا کی زمیں پر اُتر ، أٸی

کہیں عصمت دری تھی کہیں لاشیں پڑی تھیں
چشمِ غیور پھر بھی نہ کوٸی ، شرماٸی

جُنٗبشِ اَنگُشت سے پیوستہ عالمِ بے حیاٸی
اتنی أسان تو کبھی نہ تھی ، براٸی

دِلوں میں کَجی تو پہلے ہی تھی پِنہاں
اب تو ہاتھ ملانے سے بھی گۓ ، بھاٸی

کیا حق ارضِ خُدا کو میلا کریں ہم
کیسے ممکن تھا جوش میں نہ أتی ، خداٸی

”اخلاق“ کرونا سے بچنے کی یہی سبیل ہے اب
سب مل کر اپناٸیں ہم اس کے دَر کی ، گداٸی

Rate it:
21 Mar, 2020

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Akhlaq Ahmed Khan
Visit 111 Other Poetries by Akhlaq Ahmed Khan »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City