وہ لوگ ہی کچھ اور تھے

Poet: درخشندہ
By: Darakhshanda, Huston

 وہ لوگ ہی کچھ اور تھے
وہ اب ہم میں نہ رہے اور ہم ان جیسے نہ ہوے

سادہ دل مخلص لوگ عہد کے پکے زباں کے سچے
وہ لوگ ہی کچھ اور تھے
اپنے وقت میں سے ہمیں وقت وہ دیتے رہے

ہوے بےوقت ہم اپنے لیۓ دیں وقت ہم کسی کو کیسے
وہ لوگ ہی کچھ اور تھے
شیر کی نگاہ سونےکا نوالا اب یوں شتر بے مہار ہم ہوے

نہ وقت وہ رہا نہ باتیں بے عہد و بے اصول ہم ہوے
وہ لوگ ہی کچھ اور تھے

Rate it:
17 Oct, 2020

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Darakhshanda
Penning my thoughts on life through poetic expression. All praise is for God who blessed me the ability to write.

.. View More
Visit 93 Other Poetries by Darakhshanda »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City