پولیس گردی سے جو پردہ اُٹھاؤں

Poet: Muhammad Naeem
By: Muhammad Naeem, Sialkot

پولیس گردی سے جو پردہ اُٹھاؤں
اس بوسیدہ نظام کو جو آئینہ دکھاؤں

اکیلا ذہنی مریض ہی نہیں رہا اس کا نشانہ
زندہ لاشوں کا یہ ہے مدفن جو فسانہ سناؤں

جرائم کی پیداوار ہیں یہ پولیس والے
یہاں سب کچھ ہوتا ہےجو ان پر پیسہ لٹاؤں

صلاح الدین نے اس مافیا کا منہ ہے چڑھایا
یہی تھا وہ طریقہ قوم کو جو بات سمجھاؤں

اربابِ اختیار کب تک رسوا ہونےدیں گے ہمیں
جان کی امان مل جائے جو ان کی علم میں یہ لاؤں

یہ ہیں محافظ اور ہیں تہذیب سےبلکل عاری
شاید ہو سکیں یہ بہتر جو ادب کے سبق سکھلاؤں

ہمیں امید تھی کہ اب کی بار آئے گی بہتری
وہ سب کیا تھاجو پرانی باتوں سے روشناس کرواؤں

حکومت بھی اگر ان کے آگے ہے بے بس
پھرچپکے سے روشنی کاجودیاہےاسےہی بجھاؤں
 

Rate it:
06 Sep, 2019

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Muhammad Naeem
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City