پیاسے تو تشنگی کا سمندر ہی لے چلیں

Poet: Hasan Shamsi
By: F.H.Siddiqui, Lucknow

جائیں جہاں بھی یہ ، دل مضطر ہی لے چلیں
پیاسے تو تشنگی کا سمندر ہی لے چلیں

ہا رے تمام اہل سفر حوصلے تو کیا
آ ؤ ہم اپنے عزم کے لشکر ہی لے چلیں

ناکام میکدے سے یوں جانا حرام ہے
حاصل نھیں شراب ، تو ساغر ہی لے چلیں

کچھ تو نشان زخم تمنا کے ساتھ ہوں
“ آئے ہیں اس گلی میں تو پتھر ہی لے چلیں “

نفرت کی آندھیوں نے کیا در بدر ہمیں
آؤ ہم اپنے گاؤں کے منظر ہی لے چلیں

تسکین زخم دل کے لئے کچھ تو چاہئے
مرحم نہیں نصیب تو نشتر ہی لے چلیں

یہ شعر و شاعری ترے بس کی نہیں ‘حسن‘
وہ کارواں ہے یہ جو سخنور ہی لے چلیں


۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جناب ناصر کاظمی کے مصرعہ طرح پر ایک طرحی غزل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Rate it:
30 Mar, 2015

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: F.H.SIDDIQUI
*Social science teacher and trainer

.. View More
Visit 158 Other Poetries by F.H.SIDDIQUI »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City