چلو تم کو بھی بتلادیں

Poet: سرور فرحان سرور
By: Sarwar Farhan Sarwar, Karachi

چلو تم کو بھی بتلا دیں
محبت ہم نہیں کرتے
کسی کا دم نہیں بھرتے
کسی کی یاد میں جل کر
یہ پلکیں نم نہیں کرتے
چلو تم کو بھی بتلا دیں

سبھی سے ہنس کے ملتے ہیں
سبھی کے ساتھ چلتے ہیں
مگر جب چاہ کی چاہ ہو
بہت محتاط چلتے ہیں
چلو تم کو بھی بتلا دیں

نئے یاروں کی سنگت میں
پرانے بھول جاتے ہیں
کوئی جو روٹھ جاتا ہے
منانا بھول جاتے ہیں
چلو تم کو بھی بتلا دیں

ہمارا ساتھ ہے جھوٹا
ہماری بات جھوٹی ہے
ہمارے لفظ میں شامل
ہر اک سوغات جھوٹی ہے
چلو تم کو بھی بتلا دیں

محبت، صرف دھوکہ ہے
سراب اک بے نشاں بیشک
مگر کس کو مفر اس سے
رہے خواہ بدگماں بیشک
چلو تم کو بھی بتلا دیں

یہاں ہر چیز جزوقتی
یہاں ہر چیز فانی ہے
فقط چند یوم کی الفت
کہ فانی زندگانی ہے
چلو تم کو بھی بتلا دیں

کوئی معشوق نہ عاشق
سب اپنی ذات میں گم ہیں
محبت اور نفرت سب
فقط توہمات میں گم ہیں
چلو تم کو بھی بتلا دیں

Rate it:
08 Apr, 2020

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Sarwar Farhan Sarwar
I have been teaching for a long time not because teaching is my profession but it has been a passion for me. Allah Almighty has bestowed me success i.. View More
Visit 95 Other Poetries by Sarwar Farhan Sarwar »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City