فراق وغم، شب ہجر میں تھامے سخن یوں چل دیا

Poet: محمد عمر رضاBy: muhammad Umer, Karachi

فراق وغم، شب ہجر میں تھامے سخن یوں چل دیا
ساتھ کٹھن، انجان منزل، راہ نئی ایک یوں چل دیا

نہ مقصود منزل، مگرتلاش نور،راہ نئی کو چل دیا۔۔۔
دل شکستہ تاریک راہیں سفر نیا اور یوں چل دیا۔۔۔

اک آغاز سخن،نئی پہچان راہ کو نئی یوں چل دیا۔۔۔
نہ ہجوم زمانہ وہ محفل، میں راہ کو نئی یوں چل دیا۔۔

Rate it:
Views: 111
08 Oct, 2021