صبح سویرے

Poet: UABy: UA, Lahore

یاد آئی وہ بات مجھے پھر صبح سویرے
بھولی بسری بات مجھے پھر صبح سویرے

سورج کی پہلی کرن جو اتری آنگن میں
کرنوں کی برسات لئے پھر صبح سویرے

دھوپ کی پہلی کرن سے پہلے آنگن میں
طائر اترے سوغات لئے پھر صبح سویرے

بلبل چڑیا اور کوئل کے میٹھے سریلے نغمے
جیسے کہ سر سات سنے پھر صبح سویرے

باد سحر کے نرم شبنمی جھونکوں سے
شاداب ہوئے پھولوں کے ہاتھ پھر صبح سویرے

قدرت نے عنایت کی ہیں کیا کیا سوغاتیں
سبحان اللہ کلمات کہے پھر صبح سویرے

عظمٰی قدرت کے نظارے آ کے تم بھی دیکھو
پھولوں کی حسیں برسات کہے پھر صبح سویرے

یاد آئی وہ بات مجھے پھر صبح سویرے
بھولی بسری بات مجھے پھر صبح سویرے

Rate it:
Views: 295
29 Feb, 2012