نہ ہو کوئی بات پِھر بھی بات کِیا کرے کوئی

Poet: عبّدُالجَبّار
By: Abdul Jabbar Larik, Daharki

نہ ہو کوئی بات پِھر بھی بات کِیا کرے کوئی
تاحیات خُوشی کی سوغات دِیا کرے کوئی

آ کر زِندگی میں پھر کیوں تنہا کرے کوئی
ایسے میں کیسے بتاؤ بھلا جِیا کرے کوئی؟

تنہا تنہا راتوں میں اگرچہ خیال سُنہرے ہوں
ایسے خیالوں سے کیونکر ڈرا کرے کوئی

موج در موج دریا کی پُر جوش روانی میں
راہ خود بن جائے موسیٰ جیسی دُعا کرے کوئی

بن جائے حصہؑ تاریخ پِھر نہ کوئی مِٹا سکے
داستانِ محبت میں ایسی وفا کرے کوئی

اہشکستہ ہے دل کوئی تو طبیب کو بلاؤ
زیرِ عِلاج ہے دل کُچھ تو دوا کرے کوئی

بےمعنیٰ سی گُزار دی زیست عدم بن کر
کِس حٙیا سے اب خُدا کو سجدہ کرے کوئی

اِس دُنیا میں صبر و شُکر سے ہمنے بسر کر لی
یہی وقت ہے اب اجل کو صدا کرے کوئی

چند سانسیں ہیں دی ہوئی اُسی کی ہیں
حق تو یہ ہے اسی کا حق ادا کرے کوئی

خود بھی میسر نہیں خود کو ہم عبّدُل
کبھی تو کوئی ہمارا بھی ہُوا کرے کوئی..
 

Rate it:
11 Jul, 2020

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Abdul Jabbar Larik
Visit 5 Other Poetries by Abdul Jabbar Larik »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City