حارث،آصف متاثرکن پرفارمنس نےناقدین کوخاموش کردیا

image

پاکستان میں کرکٹ کا جنون ہے جبکہ اس جنون میں شائقین کئی بار اعداد و شمار پر نظر دوڑائے بغیر ہی کھلاڑیوں پر تنقید شروع کر دیتے ہیں، جبکہ شائقین کو یہ سمجھنے میں برسوں لگتے ہیں کہ جن کھلاڑیوں کو وہ “اسٹار پرفارمر” دراصل ایک “اوسط درجے” کے کھلاڑی ہوتے ہیں۔

آئی سی سی ٹی20ورلڈکپ کے پہلے دو میچوں میں پاکستان کی جیت کے بعد، شائقین ان کھلاڑیوں سے معافی مانگ رہے ہیں جنہوں نے ان سے توقعات سے زیادہ بہتر کارکردگی کا مظاہرہ کیا۔

ٹوئٹر پر فرضی معافی کے مختلف فارمز گردش کررہے ہیں جس پر شائقین ان تمام کھلاڑیوں سے معافی مانگنے کے لیے دستخط کر رہے ہیں جن پر وہ ماضی میں تنقید کر چکے ہیں۔

معافی کا آغاز کہاں سے ہوا؟

پاک بھارت میچ سے قبل حارث رؤوف شدید تنقید کی زد میں تھے، جبکہ انکے اعدادو شمار کے مطابق وہ میچ کے اختتامی لمحات میں بہترین باؤلنگ کا مظاہرہ کررہے تھے تاہم بھارت کیخلاف میچ میں حارث نے کسی بھارتی بلےباز کو کھل کر کھیلنے کا موقع فراہم نہیں کیا تھا۔

حارث نے اپنے 4 اوورز میں محض 25 رنز دیئے تھے جبکہ بیک ٹو بیک سلو گیندیں کرکے کمنٹیٹرز اور مداحوں کو حیران کردیا تھا۔

رؤف نے اپنے آخری دو اوورز میں بالترتیب چار اور سات رنز دیے۔ اگرچہ شاہین کی شعلہ انگیز باؤلنگ اسپیل نے سرخیوں میں جگہ بنائی لیکن رؤف کی ڈیتھ اوورز میں بولنگ شائقین کرکٹ کی نظروں سے اوجھل رہی۔

ٹورنامنٹ کے پہلے دو میچوں میں حارث روؤف نے 8 اوورز میں مجموعی طور پر 5.87 رنز فی اوور کے اکانومی ریٹ کے ساتھ 5 وکٹیں حاصل کیں۔ جس نے مداحوں کی رائے بدلنے میں اہم کردار ادا کیا۔

رؤف کی ڈیتھ اوورز میں باؤلنگ میں غیر معمولی ہے۔ ٹی 20 بین الاقوامی میچوں میں ڈیتھ اوورز (16-20) میں باؤلنگ کرتے ہوئے اس کا اکانومی ریٹ 7.47 رنز فی اوور ہے۔ ڈیتھ اوورز میں انٹرنیشنل کرکٹ میں (کم سے کم 150 گیندوں) میں تیز گیند بازوں کے لیے بہترین اکانومی ریٹس کی فہرست میں نویں نمبر پر ہیں۔

آصف علی کا معاملہ بھی کچھ زیادہ مختلف نہیں ہے۔ انکا ٹی20 کرکٹ میں مجموعی اسٹرائیک ریٹ میں 148.14 ہے لیکن اس حیران کن اسٹرائیک ریٹ کے ساتھ بھی آصف علی کو شدید تنقید کا سامنا کرنا پڑا ہے۔


News Source   News Source Text

WATCH LIVE NEWS

مزید خبریں
تازہ ترین خبریں
مزید خبریں

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.