آج اُترا وہ مری بات کو سمجھا کیا ہے

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

آج اُترا وہ مری بات کو سمجھا کیا ہے
فلسفہ میں نے محبت کا ہے سمجھاکیا ہے

دل کے صحرا میں بڑے زور کا بادل برسا
محو حیرت ہوں میں جس چیز سے ٹوٹا کیا ہے

جس سے اک عمر رہا دعویٔ قربت مجھ کو
ہائے اس نے نہ کبھی ملنے کا سوچا کیا ہے

مژ دۃِ ہجر وصل وہ دیتا ہی رہا
وصل برپا تو ہوا، لطف میں اپنا کیا ہے

کتنی شدت سے ترے عارض و لب یاد آئے
جب سر شام افق پر کوئی کہتا کیا ہے

تو نہیں پر تری یادوں کے ہیں سائے دل پر
مجھکو ہر پل ترا ہونے کا برپا کیا ہے

اب کے اس طور سے آئی تھی گلستاں میں بہار
دامن شاخ میں سوکھا ہوا پتا کیا ہے

آئنہ جھوٹ یہ کہتا ہے کہ وشمہ وہ نہیں
اپنی آنکھوں سے ترا عکس ہٹا نا کیا ہے

Rate it:
01 Oct, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4528 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City