اک نشہ تھا تجھے سے محبت کا مگر اب میں اُتَر بیٹھا ہوں

Poet: Dani
By: Dani, Lahore

اک ملنے کو تجھ سے
میں زندگی کا اُدھر کر بیٹھا ہوں
اب موت نہ جانے کب آجائے
میں سامان تیار کر بیٹھا ہوں
یہاں تو یقین اپنی سانسوں تک کا نہیں
اور میں کمبحت تیرا اعتبار کر بیٹھا ہوں
گھنی رات ، تیری یاد اور وہ برسات
اے عشق کچھ تو بتا میں کیا آخر یار کر بیٹھا ہوں
یہ تنہائی اس کا تحفہ ہے اِس لیے دِل سے لگا رکھتا ہوں
اور یار سمجھتے ہیں دانش میں اظہار کر بیٹھا ہوں

Rate it:
03 Apr, 2020

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Dani
Visit 5 Other Poetries by Dani »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City