ایسی تنہائی کہ مر جانے کو جی چاہتا ہے

Poet: م الف ارشیؔ
By: Muhammad Arshad Qureshi, Karachi

اب تو صحرا میں بکھر جانے کو جی چاہتا ہے
" ایسی تنہائی کہ مر جانے کو جی چاہتا ہے "

کتنی وحشت تھی مرے شہر کے ہر اک گھر میں
جانے کیوں پھر مرا گھر جانے کو جی چاہتا ہے

اب نہیں حوصلہ مجھ میں کہ میں اس سے کہدوں
اب تو تجھ سے بھی مکر جانے کو جی چاہتا ہے

کتنی بپھری ہوئی ہیں آج تو اس کی موجیں
اس سمندر میں اتر جانے کو جی چاہتا ہے

زندگی کیا ہے کبھی تو ہی بتا دے مجھ کو
کیوں مرا حد سے گذر جانے کو جی چاہتا ہے

لوگ سچے ہوں جہاں ساتھ نبھانے والے
اب کسی ایسے نگر جانے کو جی چاہتا ہے

فیصلہ کرنے میں درپیش ہے مشکل کیسی
لوٹ کر تیرا اگر جانے کو جی چاہتا ہے
 

Rate it:
30 Sep, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Muhammad Arshad Qureshi
My name is Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) belong to Karachi Pakistan I am
Freelance Journalist, Columnist, Blogger and Poet.​President of Internati
.. View More
Visit 208 Other Poetries by Muhammad Arshad Qureshi »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City