اے زندگی تونے

Poet: نام درخشندہ تخلص درخشندے
By: darakhshanda, Blairsden

نہ تھے کُورِچشم مگر یہ سفر بازیچہ فریبِ نظر بہت
ازروۓ فہم ہوے حیراں گرچہ آیا نہ سمجھ آیا بہت

جاتے جاتے اے زندگی تو نے نقاب اُ ٹھایا بہت
دبیز پردوں میں چھپا اصل ہم کو دکھایا بہت

مگر آشکارِ اسرار سے قبل تو نے ہم کو رلایا بہت
جاتے جاتے اے زندگی تونے ہم کو سکھایا بہت

نہ تھے ہم زرہ آفتاب نہ زرہ ماہتاب مگر
انتہاۓ شوقِ سخن وری نے سجل بنایا بہت

اُس بادہ نوش کو بزمِ سخن میں سمجھایا بہت
آی نہ حیا اُن کو مگر آی یوں ہم کو لاج بہت

چھوڑ گیا تھا وہ پھر کبھی نہ آنے کے لیۓ
اختتامِ سفر کے قریب وہ اپنی جانب لوٹ آیا بہت

درخشندے اپنے مقدر کا رونا ہم نے اب رولیا بہت
اپنے جانے اور ان کے رونے کا اب وقت آیا بہت

(درخشندے)
 

Rate it:
11 Aug, 2020

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: darakhshanda
Visit 39 Other Poetries by darakhshanda »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City