بارش

Poet: بلبل سفیر)بختاور شہزادی)
By: BAKHTAWAR SHEHZADI, GUJRAT

منتشر تھا بارش میں تنہا کھڑا ہوا
مہبوت تیری یادوں میں الجھا ہوا
تیری یاد میں مخبوط الحواس بھی ہوا
منتشرالزہن تھا اختتام پزیر بھی ہوا
ہلاکت آفریں تھا وہ لمحہ بچھڑا ہوا
شششدر ہوں شاید, نہیں جانتا کیا ہوا
گمبیھر لہجے میں خود سے پوچھتا ہوا
بحث وتمحیص خوب کی کچھ حاصل نہ ہوا
کہیں ادھر اُدھرمیں پھرتا ہوا
بارش کو بے کیف محسوس کرتا ہوا
کہیں ہاتھ پھیلاۓ بن پروں کے اڑتا ہوا
منظر رم جم کا آنسووں کو چھپاتا ہوا
برگشتہ طالعی تھی میری نہ جانتا ہوا
سفاکانہ انداز تیری یادوں کا ہوتا ہوا
چہرہ آسماں کی جانب میں کرتا ہوا
ہار کے خود سے خود کو آزاد کرتا ہوا
تصور میں تجھے ہمیشہ پاتا ہوا
بارش کی طرح تجھے الوداع کرتا ہوا
نہیں جانتا, تھا کب لوٹ کے آنا ہوا
ہر بار تو جاتا ہے حیراں کرتا ہوا

Rate it:
13 Mar, 2020

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: BAKHTAWAR SHEHZADI
Visit Other Poetries by BAKHTAWAR SHEHZADI »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City