تمہیں سلام

Poet: رضوانہ عزیز
By: Rizwana aziz, Karachi

سفید پوشاک پہنے بیٹھی تھی اک نرس
ہاتھ میں کتاب تھامے سوچتی تھی اک نرس
ایّام آخر کب آ پوھنچے کیا پتا ہے
زندگی کا آخر کیا بھروسہ ہے
نکالوں کچھ وقت عبادت کے لئے بھی
کر لوں تیّار ی اگلی مسافتکے لئے بھی
یونہی سوچوں سے چو نک کے جو دیکھا
اک پرنور چہرہ سامنے پایآ
کچھ ہکلا کے کچھ گھبرا کے وہ گویا ہوئی اس سے
ہو کون اور کیا کام ہے مجھ سے
خدا نے بھیجا ہے مجھے ہوں میں اک فرشتہ
پریشا ن تھا بہت میں روز گزشتہ
نرس گھبرا کے بولی پریشانی تھی کیا بولو
گزشتہ واقیہ مجھ پر بھی تو کھولو
!فرشتہ مسکرا کر بولا آے نرس پیاری
جو پریشانی تھی ساری تھی تمہاری
بنا عبادت بھی لوگ کچھ پا لیتے ہیں جنّت
خدا کہتا تھا کہ ڈھونڈو ہیں کون وہ خوش قسمت
لوٹتا ہوں میں اب ہوئی تلاش میری تمام
دھرتی پر سب نرسوں کو میرا سلام

Rate it:
03 Oct, 2020

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Rizwana aziz
Visit 22 Other Poetries by Rizwana aziz »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City