تم سے ملنے کا کوئی رستہ کوئی دریچہ

Poet: حیات دیجہ
By: Umar Hayat, Lahore

تمہارا کہنا کہ تم سے ملنے کا
کوئی رستہ کوئی دریچہ کوئی وسیلہ
کوئی بہانہ بھی مت بنانا
تمہارے کہنے میں آ کے میں نے
محبتوں کو دبا کے دیکھا
کہ اپنے دل کو رلا کے دیکھا
مجھے خبر ہے تمہیں پتہ ہے
محال ٹھرا تمہارا ملنا
مگر تمنا کے پھول کھلنے میں کیا غلط ہے
تمہی بتاؤ نا دور بیٹھی یوں مسکراؤ
کہ تم سے ملنے میں کیا غلط ہے
تمہاری باتیں ہوا سے کرنے میں کیا غلط ہے
تمہارا چہرہ تمہاری آنکھیں مجھے جو بھائیں تو کیا غلط ہے
کھرچ بھی دوں گر تمہاری یادیں کیا تیرا چہرہ بھلا سکوں گا
اگر ابھی بھی یہی ہے کہنا کہ تم سے ملنے کا کوئی رستہ کوئی دریچہ کوئی وسیلہ
کوئی بہانہ بھی نہ بنانا
تو مجھ کو کہنا ہے صرف اتنا
کہ حق میرے دعایہ کرنا
کہ زندگی کی طویل راہ میں
حیات باقی کی ہر گھڑی میں
اجاڑ رستے چلا نہ جاؤں
کہ یاد رکھوں تجھے تو ہر پل
مگر میں خود کو نہ یاد آؤں۔
 

Rate it:
29 Jun, 2020

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Umar Hayat
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City