تیرے لئے بھی کبھی تو لازمی تھے ہم

Poet: میر اسامہ ٹالپر وحشت
By: Usama Talpur, Hyderabad, Sindh

تیرے لئے بھی کبھی تو لازمی تھے ہم
عشق تھا وہ یا فقط آرضی تھے ہم

وہ کلاس کی کھڑکی سے تجھے یوں تکنا
وہ یاد ہے بچپن میں کتنے شرارتی تھے ہم

وہ ہمیں دیکھ کر تیری آنکھوں کا بھر جانا
تیری آنکھوں کی کبھی روشنی تھے ہم

اتنا ظلم کیا تھا تم نے ہماری ذات پر
بھول گئے تھے تم شاید کے آدمی تھے ہم

آج وہ منہ موڑ کر جائے گا تو که دونگا
یاد ہے تمھیں کے کبھی ساتھ بھی تھے ہم

بس یہی سوچ کر وحشت جدا رہنے لگے ہم
بے وفا تھے تم اور برے آدمی تھے ہم

Rate it:
31 Mar, 2020

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Usama Talpur
Visit 2 Other Poetries by Usama Talpur »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City