جلا کے خط بھی وہ سارے ہی خاک کر ڈالے

Poet: م الف ارشیؔ
By: Muhammad Arshad Qureshi, Karachi

عجب سرور تھا اس آنکھ کے اشارے میں
ہم اس کے بعد سے اب تک رہے خسارے میں

پتا میں کیسے بتاؤں کہاں پہ رہتا ہے
ہمیں تو آتا نظر ہے وہ ہر نظارے میں

بھلا میں کیسے کہوں تو ہی میرا حاصل ہے
" کوئی اشارہ تو اب ہوگا استخارے میں "

عجیب شخص ہے وہ تلخیاں بھی رکھتا ہے
مگر وہ پوچھتا ہے سب سے میرے بارے میں

ابھی تو ابتدا ہے خوف کا ہے یہ عالم
ابھی تو آگ بھی بھڑکے گی اس شرارے میں

جلا کے خط بھی وہ سارے ہی خاک کر ڈالے
اور ان کی خاک بھی رکھ دی ہے اک پٹارے میں

گماں سا ہوتا ہے شاید کہیں وہ مل جائے
یہی میں سوچتا رہتا ہوں اس کے بارے میں
 

Rate it:
07 Oct, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Muhammad Arshad Qureshi
My name is Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) belong to Karachi Pakistan I am
Freelance Journalist, Columnist, Blogger and Poet.​President of Internati
.. View More
Visit 208 Other Poetries by Muhammad Arshad Qureshi »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City