دل سے رشتوں کو نبھایا جائے

Poet: Asad
By: Asad, mpk

دل سے رشتوں کو نبھایا جائے
پیار میں انتہا تک جایا جائے

پیار نازک ھے کانچ کے جیسا
سنگ دلوں سے اسے بچایا جائے

وہ جو عیب ھے یار میں اپنے
بہتر ھے سب سے چھپایا جائے

دل ھے ایک انمول خزانہ صاحب
ہر کسی پر نہ اسے لٹایا جائے

کوئی تلقین صبر ہو خود کو
ہر بات پر نہ یوں ہی آیا جائے

اس کو اعتبار نہیں ھے شاید
چلو دل چیر کر اسے دکھایا جائے

عشق کے ماٹھے جو کلنک ھے لگا
اپنی آبرو سے اسے بچایا جائے

موت آنی ھے اسد آئے گی
پھر کس بات سے گھبرایا جائے؟

Rate it:
27 Nov, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Asad
Visit 357 Other Poetries by Asad »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City