روز اک موڑ یہ کیوں لاتا ہے رستہ آخر

Poet: azharm
By: azharm, doha

روز اک موڑ یہ کیوں لاتا ہے رستہ آخر
اس گزر گاہ پہ دیکھیں گے تو کیا کیا آخر

جانے کیسی تھی مرے ہونٹ پہ رکھی ہوئی پیاس
رو پڑا ہاتھ اُٹھائے ہوئے دریا آخر

آج اُترا وہ مری بات کی گہرائی میں
کچھ سہولت سے مجھے اُس نے بھی سوچا آخر

تُو نے آندھی کو کھُلی چھوٹ جو دے رکھی تھی
کب تلک خیر سے رکھتا مجھے خیمہ آخر

کوئی اندازہ لگائے مری مجبوری کا
تُجھ پہ کرنا ہی پڑا مجھ کو بھروسہ آخر

تُجھ کو دعویٰ تھا ترے فن میں تو یکتائی کا
کوزہ گر چاک سے اُترا میں ادھورا آخر

اس قدر کہہ تو دیا اُس نے: ’چلا جا اظہر’
اس بہانے سے ہوا مجھ سے وہ گویا آخر
 

Rate it:
26 Dec, 2014

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: azharm
Simply another mazdoor in the Gulf looking 4 daily wages .. View More
Visit 179 Other Poetries by azharm »

Reviews & Comments

Kia kehney.
Bohat khoob Azharam
Hamesha KI tarah bohat umda andaz se
Kheyalat KO ghzal Ke sanchey main dhala hai.
Daad hazir hai.

By: Azra Naz, Reading UK on Jan, 15 2015

bohat shukriya Azra
shad rahiay aur abaad rahiay ji
By: azharm, Rawalpindi on Jan, 20 2015

بہترین ، بہت خوب، اظہر بھای بہت اچھے خیالات ہیں،

By: Mohammad Sadiq Mushwani, Quetta on Jan, 05 2015

bohat shukriya janab Sadiq
shad rahiay aur abaad rahiay
By: azharm, Rawalpindi on Jan, 10 2015
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City