زندگی

Poet: م الف ارشیؔ
By: Muhammad Arshad Qureshi, Karachi

تم یہاں کھوجتے ہو لوگ خزینے والے
لوگ ملتے نہیں ہم کو دعا دینے والے

اتنی جلدی بھی تجھے کیا تھی گذر جانے کی
" زندگی ہم تھے تجھے ٹوٹ کے جینے والے "

چند لمحوں کی ہی بس تو نے بھی مہلت دی تھی
ورنہ ہم جام تھے ایک اور بھی پینے والے

جانے کس خوف سے وہ چھوڑ گئی تھی مجھ کو
ہم تو تھے آگ کے دریا کو بھی پینے والے

ڈوبتا دیکھا تو منہ پھیر لیا تھا سب نے
سامنے میرے تھے سارے ہی سفینے والے

خالی پیمانہ لیئے لوٹ گیا تھا آخر
لوگ تھے سارے ترے ہاتھ سے پینے والے

یاد شدت سے مجھے آتی ہے اب بھی اس کی
زخم آنکھوں میں امڈ آتے ہیں سینے والے
 

Rate it:
14 Oct, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Muhammad Arshad Qureshi
My name is Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) belong to Karachi Pakistan I am
Freelance Journalist, Columnist, Blogger and Poet.​President of Internati
.. View More
Visit 208 Other Poetries by Muhammad Arshad Qureshi »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City