شبِ تنہائی

Poet: زویراملک
By: Zavaira Malik, Rawalpindi

شبِ تنہائی کے اندھیرے
ان لمحوں میں
اب کہ یوں ہے جاناں
کہ
بے جان سسکیاں
لبوں پہ دم توڑ رہی ہیں
کہ اب کے جاناں
تیری یادوں کی زنجیروں سے
آزاد جیسے موت کی دہلیز کو پار کررہی ہوں
کہ اس شبِ تنہائی کی تاریکی
میرے بےجان وجود کی رگ و پے میں
سرایت کر تی ایسے رقصاں ہے
کہ جیسے صدیوں سے یہ یہاں کی مکیں ہو
کہ شبِ تنہائی کی ان گھڑیوں میں
اب کہ جاناں
آنکھوں نے جیسے پتھر ہونا سیکھ لیا ہو
کہ اب کہ اس شبِ تنہائی میں
دل نے جیسے مرنا سیکھ لیا ہو
کہ اب کے جاناں
وحشتوں کی ان گھڑیوں میں
تجھے بھولنے کا
کوئی بہانہ سیکھ لیا ہو
کہ اب کی اس
شبِ تنہائی میں

Rate it:
14 Apr, 2020

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Zavaira Malik
Visit 5 Other Poetries by Zavaira Malik »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City