صدائے کشمیر

Poet: Hafiz Ansar
By: HafizAnsar, Shahkot

کبھی سن مجاہد عام تو
رکھ کے دھرتی پہ کان تو
کہ کہاں سے آتی ہے یہ صدا
مجھ کو بچا میرے رہنما
١۔ یہ سوال تجھ سے ہے پوچھتی وادیئ کشمیر ہے
کیوں نہیں آزادی ملی مجھے کیا یہ ہی میری تقدیر ہے
کب تک رہے گا تو بتا بے خبر یونہی بےوجہ
کبھی سن مجاہد عام تو۔۔۔۔۔۔۔۔۔
٢۔کبھی سوچ کر بھی دیکھ تو کشمیر کیوں ہے لہو لہو
کہیں تو ہی تو وہ طوفاں نہیں کرے جسکی ہے یہ جستجو
نظر اپنے دل میں بھی دوڑا ہو ضمیر اپنے سے آشناء
کبھی سن مجاہد عام تو۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیوں خاموش ہے تیری زباں،کیوں نہ باقی تجھ میں جنون ہے
میری بےکسی کو بھی دیکھ کر کیوں نہ کھولتا تیرا خون ہے
کیوں ضمیر تیرا ہے سوچکا ،کیوں نہ آئے تجھ میں نظر حیاء
کبھی سن مجاہد عام تو۔۔۔۔۔۔۔۔
کس بات کا ہے ڈر تجھے ،کس خوف سے ہے تو کانپتا
کہاں رہ تیرا وہ جنوں جو تھا تیری نظروں سے جھانکتا
کہا ں کھو گیا تیرا حوصلہ ،جو تھا تیری نظروں سے جھانکتا
کبھی سن مجاہد عام تو۔۔۔۔۔۔۔
کب تک رہوں گی نہاتی میں مظلوموں کے خون سے
کب لوں گی سانس آزاد فضاء میں آرام سے سکون سے
کب ہو گی وہ نئی صبح جب میں جیوں گی سر اٹھا
کبھی سن مجاہد عام تو رکھ کے دھرتی پہ کان تو
کہ کہاں سے آتی ہے یہ صدا،مجھ کو بچا میرے رہنما

Rate it:
03 Oct, 2019

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: HafizAnsar
Visit Other Poetries by HafizAnsar »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City