لمحے ساتھ جو بِتائے تھے ہم نے

Poet: دانش ارشاد
By: Danish irshad, Gojra

لمحے ساتھ جو بِتائے تھے ہم نے
وہ یاد ضرور تم کو آتے ہوں گے

مجھ سے بچھڑ جانے کے بعد
میری باتیں، میرے خیال رلاتے ہوں گے

ہمارا پتہ بتا دینا ان کو اے ہوا
گر بھول کر بھی ہمیں بُلاتے ہوں گے

پُرنم تو آنکھیں ان کی بھی ہوں گی
جب قصہِ غم کسی کو سناتے ہوں گے

ہم نے تو موت کو بھی یہ کہہ کے ٹال دیا
ذرا ٹھہر جاؤ، وہ ابھی آتے ہوں گے

یہ خیال قبر میں بھی ستاتا ہی رہا
ہمارے مرنے پہ کیا وہ آنسو بہاتے ہوں گے؟

Rate it:
21 Jul, 2020

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Danish irshad
Visit Other Poetries by Danish irshad »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City