مجھ کو تعلیم سے نفرت ہی سہی

Poet: Kaif Ahamad Siddiqui
By: Siddiqui, Sanghar

مجھ کو تعلیم سے نفرت ہی سہی

اور کھیلوں سے محبت ہی سہی

میں نے اس سے تو بڑے کام لیے

آپ کو کھیل سے وحشت ہی سہی

امتحاں سے میں نہیں گھبراتا

فیل ہونا مری قسمت ہی سہی

پڑھنے والوں نے بھی کیا کچھ نہ کیا

نقل کرنا مری عادت ہی سہی

میں نے تو صرف گزارش کی تھی

سب کی نظروں میں شکایت ہی سہی

میں کسی سے نہ لڑوں گا ہرگز

دب کے رہنا مری فطرت ہی سہی

میں نہ چھوڑوں گا شرافت کا چلن

یہ شرافت مری ذلت ہی سہی

کبھی چومے گی قدم خود منزل

آج ہر گام پہ دقت ہی سہی

یہ مصیبت بھی بڑی دل کش ہے

زندگی ایک مصیبت ہی سہی

کیفؔ اک دن یہ بنا دے گی تجھے

شعر گوئی تری عادت ہی سہی

Rate it:
14 Jan, 2021

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: Hamariweb
Visit Other Poetries by Hamariweb »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City