میرے سبھی غموں کی اک تو ہی تو دوا ہے

Poet: Ansar
By: Ansar, shahkot

میرے سبھی غموں کی اک تو ہی تو دوا ہے
جو مانگتا ہوں ہر پل رب سے وہ تو دعا ہے
وہ سردیوں کی راتیں وہ نرم گرم بستر
وہ چاند کا چمکنا میری بالکنی میں آکر
کچھ بھی لگے مجھ کو اچھا تیرے سوا ہے
جو مانگتا ہوں ہر پل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کل شب جو دیکھا میں نے وہ چھت پہ تم کو آتے
الجھی ہوئی وہ بھیگی زلفوں کو جو سکھاتے
ایسا لگا کہ چاند گھتائوں میں چھپ رہا ہے
جو مانگتا ہوں ہر پل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دل کی زمیں تھی بنجر ،سنسان جیسے کھنڈر
تیرے آنے سے ہی چھلکا تھا خشک جو سمندر
تیرے ہی دم سے دل ممیں گلشن سا اک کھلا ہے
جو مانگتا ہوں ہرپل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دل توڑ کے یہ پنجرہ تیری سمت اڑ گیا ہے
میرے جینے کا جو مقصد تیرے ساتھ جڑ گیا ہے
تیرے سنگ گزرے زندگی اک یہ ہی میری چاہ ہے
جو مانگتا ہوں ہر پل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کانٹے بھرے ہیں رستے ان کو گلاب کردے
میرے سبھی سوالوں کو اک جواب کردے
تیرے سنگ گزرے زندگی اک یہ ہی میری چاہ ہے
جو مانگتا ہوں ہر پل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عنصرتو تھا آوارہ ،پھرتا تھا مارا مارا
تجھے دیدکھ کے ملا ہے مقصد اسے پیارا
اب تو ہی میری منزل،اب تو ہی میری راہ ہے
جو مانگتا ہوں ہر پل رب سے وہ تو دعا ہے

Rate it:
26 Sep, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Ansar
Visit Other Poetries by Ansar »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City