وہ ایک لڑکی لبوں پے جب سرخی لگاتی ھے

Poet: Zain ul Abidin
By: Zain ul Abidin, Sadiqabad

وہ ایک لڑکی لبوں پے جب سرخی لگاتی ھے
خزاں کے موسم میں بہار سی چھا جاتی ھے

ساگر سے بھی گہرے اسکے وہ کالے نین یارو
نظر جو اٹھائے وہ تو رات شرما جاتی ھے

وہ سانس لے تو سندل، زباں بولے تو الفاظ امر
شرما کے جو دیکھے تو دل بے چین کر جاتی ھے

لگ نہی سکتی ان موتیوں کی قیمت بازار میں
چپکے چپکے وہ جنکو انکھوں سے بہاتی ھے

ہیں رنگ اس میں کئ ہر پل ھیں جو بدلتے
تبسم سے اسکے قوس قزا پھیکی پڑ جاتی ھے

ننگے پاوں جب چلتی ھے وہ رم جھم سی بارش میں
زمیں اسکے پیروں سے سر سبزو شاداب ھو جاتی ھے

سنا ہے کٹھن ھے بہت اترنا اسکے دل میں زین
چلو قسمت ازماتے ہیں، اس کے دل میں جگہ بناتے ہیں

Rate it:
24 Jan, 2020

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Zain ul Abidin
Nothing new to know just an ordinary man as everybody else is. . .. View More

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City