کسی کی آنکھ بھی پُرنم نہیں ہے

Poet: Wasim ahmad Moghal
By: Wasim Ahmad Moghal, Lahore

کسی کی آنکھ بھی پر نم نہیں ہے
ہمارا کوئی بھی ہمدم نہیں ہے
کسی کی زلف بھی برہم نہیں ہے
ہمارا کوئی بھی محرم نہیں ہے
بھڑک اُٹھیں گے تیرے دل میں شعلے
یہ آنسو ہیں کوئی شبنم نہیں ہے
اسے تم زندگی کہتے ہو یارو
کہ جس میں کوئی رنج و غم نہیں ہے
وہ قومیں خود ہی مر جاتی ہیں اک دن
کہ جن میں کوئی زیر و بم نہیں ہے
سفر میں کوئی دلچسپی نہ ہو گی
اگر رستوں میں پیچ و خم نہیں ہے
ستم سے یوں توجہ تو ملی ہے
ستم یہ ہے ستم پیہم نہیں ہے
نہ ہو جس کو گناہوں پر ندامت
وہ سب کچھ ہے مگر آدم نہیں ہے
یہ دل کے زخم ہیں اے میرے بھائی
اور ان کا کوئی بھی مرہم نہیں ہے
مجھے بھی سب نظر آتا ہے اِس میں
یہ میرا جام جامِ جم نہیں ہے
یہ میخانہ ہے میخانہ اے یارو
یہاں کوئی کسی سے کم نہیں ہے
 

Rate it:
26 Nov, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Wasim Ahmad Moghal
Visit 167 Other Poetries by Wasim Ahmad Moghal »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City