کہتا ھے دل کے پاس تو آنے سے گریز کر۔

Poet: Asad
By: Asad, mpk

کہتا ھے دل کے پاس تو آنے سے گریز کر
جو تجھکو قریب لے آئے اس بہانے سے گریز کر

بھلے استوار رکھ تو روابط اپنے دل سے۔
ہان مگر کوئی شرط وفا لگانے سے گریز کر

چڑھا دے سولی یار اگر یہ آسان ھے تجھ کو
پر پیار مین تو صبر اپنے آزمانے سے گریز کر

زمانے کا کیا ھے مطلبی ھے وہ صرف مطلبی
تو جھانسے مین اسکے بہرحال آنے سے گریز کر

ساقی مجھ کو پینے دے تو آج بے حساب
اتنا پیا اور ایتا پیا اس پیمانے سے گریز کر

اسد خوب جانتے ہیں ھم کار ستانیاں اپنی
تو مزید اپنے سے ھمیں سمجھانے سے گریز کر

Rate it:
22 Sep, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Asad
Visit Other Poetries by Asad »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City