کہتے ہیں وہ وفا کو نبھایا نہیں گیا

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, منیلا

کہتے ہیں وہ وفا کو نبھایا نہیں گیا
دل میں تو ایک دل کو بسایا نہیں گیا

ٹوٹا مرے یقین کا میرے ہی ہاتھ سے
اک آئینہ تھا وہ بھی بچایا نہیں گیا

برسا ہے درد اشک کی صورت زمین پر
دریا تو آنسوؤں کا بہایا نہیں گیا

حیوانیت زمین پہ جلوہ فروز ہے
انسانیت کو پھر بھی بلایا نہیں گیا

میرے طبیب! تجھ سے کروں دوستی میں کیا
اک پھول دل کا تجھ سے کھلایا نہیں گیا

جو بھول چکا پیار کے قول و قرار سب
وشمہ وہ بے وفا تو بھلایا نہیں گیا

Rate it:
12 Jan, 2021

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: وشمہ خان وشمہ
I am honest loyal.. View More
Visit 4712 Other Poetries by وشمہ خان وشمہ »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City