کیا خُوشی کیا غمی بھی بھول گیا

Poet: جنید عطاری
By: جنید عطاری, چکوال

کیا خُوشی کیا غمی بھی بھول گیا
اب تو وہ من چلی بھی بھول گیا

اِس قدر خُوب تھا وہ خُوش قامت
دیکھتے شاعری بھی بھول گیا

جی لگاتے لگاتے اُس سے میں
آخرش دل لگی بھی بھول گیا

مدّتوں بے سبب اداس رہے
وجہِ افسردگی بھی بھول گیا

دیکھ کر اُس کی چشم ِپُرنم کو
آستیں کی نمی بھی بھول گیا

سرِبالیں میں دیکھتے ہی اُسے
موت کی جانکنی بھی بھول گیا

بستیوں اب مرا یقین آیا
جب میں آوارگی بھی بھول گیا

اب مری یاد کھینچ لائی ہے؟
جب تمہاری کمی بھی بھول گیا

ناز اٹھاتے میں زندگانی کے
دوستی دشمنی بھی بھول گیا

جانیے کیا سحر کیا اُس نے
اپنی شعلہ زنی بھی بھول گیا

دمِ رخصت لہو نہ رویا اور
مرتے دم تک ہنسی بھی بھول گیا

گاہے گاہے میں طنز کرتے وقت
اُس کی بیچارگی بھی بھول گیا

کوچۂ یار کا کوئی پاگل
ایسا سُدھرا گلی بھی بھول گیا

Rate it:
02 Aug, 2014

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: جنید عطاری
Facebook page:
http://www.facebook.com/dead.in.thine

، آپ مرا تازہ کلام یہاں ملاحضہ فرما سکتے ہیں
http://www.facebook.com/agr.poetry
.. View More
Visit 96 Other Poetries by جنید عطاری »

Reviews & Comments

buht khoob buht rawan aur shusta shairty hoti hai
buht khubsurat kalam pesh kia hai ap ny hsb e mamool
khush rahain salamat rahain

By: uzma, Lahore on Aug, 04 2014

متشکر ہوں
By: جنید عطاری, Chakwal on Aug, 05 2014
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City