گرمی میں چلا آتا، تُو کیوں آیا دسمبر

Poet: azharm
By: azharm, doha

گرمی میں چلا آتا، تُو کیوں آیا دسمبر
پگھلے تو بنے گا نہ کوئی رستہ، دسمبر

محفل میں اُٹھا شور کہ برپا ہوا ہجراں
نکلا تھا مرے منہ سے بر جستہ دسمبر

تھی عشق کی گرمی جو پریشان ہوا تھا
کھسیانی ہنسی ہنستا وہ یخ بستہ دسمبر

یہ کھیل ہی سارا ہے طلب اور رسد کا
مہنگی ہوئی گرمی تو ہے اب سستا دسمبر

اُلفت کے پرستار کہیں عید مناتے
پر اُن کے لئے تُو ہے بڑا خطرہ دسمبر

کہتا ہوں یقیں سے کوئی گُل رہ بھی نہ پاتا
غلطی سے کہیں ہوتا یہ گُلدستہ دسمبر

چل خیر سے اظہر انہیں برداشت کریں گے
ہجراں کی یہ شب، اُس سے یہ پیوستہ دسمبر
 

Rate it:
12 Dec, 2014

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: azharm
Simply another mazdoor in the Gulf looking 4 daily wages .. View More
Visit 179 Other Poetries by azharm »

Reviews & Comments

Bohat khoob Azharam
Hamesha ki tarah umda andaz e beyan
Aur dilkash tehreer.
Bohat umda kheyal beyan kia hai aap ne.
Daad Qabool ho.

By: Azra Naz, Reading UK on Dec, 19 2014

bohat shukriya Azra hosla barha bohat
shad o abad rahiay
By: azharm, Rawalpindi on Dec, 21 2014
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City