ہاتھ ملانے والا ہر شخص , اپنا تو نہی ہوتا نا

Poet: سید فرخ امداد
By: Syed Farrukh Imdad, Lahore

ہاتھ ملانے والا ہر شخص , اپنا تو نہی ہوتا نا
جو کھلی آنکھ سے دیکھیں, سپنہ تو نہی ہوتا نا

اس کا نشہ بھی یارو شراب جیسا ہے
اسکی گردن پہ جو آتا ہے, پسینہ تو نہیں ہوتا نا

بارش سے دوستی کرنی ہے تو زرا سوچ کے کر
اتنا بھی پائیدار ہمارا آشیانہ تو نہیں ہوتا نا

میں اب کہاں سوتا ہوں تیرے جانے کے بعد
مجھے ہر وقت میسر کسی کا شانہ تو نہیں ہوتا نا

وہ آتا تھا تو خزاں میں بھی پھول کھلتے تھے
اتنا سحر انگیز کسی اور کا آنا تو نہیں ہوتا نا

آسمان کو دیکھوں تو سوچتا ہوں اکثر
بغیر سہارے کے فرخ، شامیانہ تو نہیں ہوتا نا

Rate it:
23 Aug, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Syed Farrukh Imdad
Visit 12 Other Poetries by Syed Farrukh Imdad »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City