ہجر کی دُھوپ

Poet: Khan Muhammad Imran - Emron Mano
By: Muhammad Imran Khan, Peshawar

ہجر کی دُھوپ میں جل رہاتھا یہ بدن میرا،
گیسُو بکھرے جو تمھارے تو مَن کو چین ملا،

دلوں میں خَار جو رکھتے تھے وہ بھی حیراں ہیں،
نصیبِ یار تُجھے کون سا ارمان ملا،

جتنے بھی دوست تھے میرے وہ مُجھے چھوڑ چلے،
میرے نصیب بھلے حلقہِ یاران ملا،

چراغ بُجھا کے بیٹھتے تھے اب چراغاں ہے،
میرے خُدا زندگی میں شبستان ملا،

اپنی قسمت پہ خُدایا میں کیوں نہ ناز کروں،
ہمیں بھی چاہنے والا کوئی جانان ملا۔
 

Rate it:
19 Apr, 2016

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: Muhammad Imran Khan
I am Muhammad Imran Khan, from Peshawar.

I am a very simple, God fearing, caring, talented, understanding, trustworthy and kind hearted human bein
.. View More
Visit 112 Other Poetries by Muhammad Imran Khan »