ہو نا جائے

Poet: Meem Jeem
By: Jawad, Buffalo Gr

چھپتے چھپاتے ، یونہی ڈرتے ڈرتے
کہیں دل یہ پھر سے، رسوا ہو نا جائے

ہونا جائے نظر،جستجو اک نظر کی
اک نظر کو ہماری، جستجو ہو نا جائے

گنا سے بچیں ، اور گنا ہو نا جائے
یہ جان کسی پے ، فدا ہو نا جائے

لگتا ہے ڈر اب تو ، یے سوچنے سے دل کو
عشق کے مرض میں یے ، مبتلا ہو نا جائے

مر مٹیں دیکھ کے ،حسن کے چند کرشمے
کسی کی ادا کا، اثر ہو نا جائے

دبستان ے جنوں میں،رہے دل شکستا
ہر گھڑی جیت کی، تمنا ہو نا جائے

کبھی مسکرا دیں ،کبھی یونہی رو دیں
یہی ایک حالت، مستکل ہو نا جائے

محبوب کسے چاھے ،ہو کیسے گوارا
رقیب کوئی اپنا ، شناسا ہو نا جائے

ملے گا جیم جب تک ، کوئی حسین تب تک
اسی خیال میں سب، فنا ہو نا جائے
 

Rate it:
29 Aug, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Jawad
Visit 2 Other Poetries by Jawad »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City