زیست کے ساتھ تجربہ بھی نہیں

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

زیست کے ساتھ تجربہ بھی نہیں
اور اس جیسا حوصلہ بھی نہیں

تیری یادیں ہی میرا مسکن ہیں
پھر بھی تشہیر ہوں صلہ ہی نہیں

ڈوب جائے نہ یاد کا منظر
آنکھ میری میں ڈوبتا ہی نہیں

ساری دنیا ہے بے خبر مجھ سے
تیرا میرا کوئی گلہ ہی نہیں

چشمِ افلاک دیکھتی ہے مجھے
اور ترے ساتھ رابطہ بھی نہیں

میرے دل کو وہ کر گیا گھائل
تیری یادوں کا سلسلہ ہی نہیں

تیری آنکھوں کی مستیاں پا کے
ڈھیر ہوتے ہی راستہ ہی نہیں

تیری خواہش میں گر گئی ہوں یہاں
تیری خواہش میں فیصلہ ہی نہیں

جب سے تیری میں ہوگئی وشمہ
میرا جیون سے رابطہ ہی نہیں

Rate it:
18 Mar, 2016

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: وشمہ خان وشمہ
I am honest loyal.. View More
Visit 4712 Other Poetries by وشمہ خان وشمہ »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City