bbc-new

جنوبی کوریا کے نوجوان شہر چھوڑ کر گاؤں واپس کیوں جا رہے ہیں؟

کئی دہائیوں تک سیول، جنوبی کوریا میں ترقی کی ایک مثال بنا رہا ہے لیکن آج بہت سے نوجوان مستقبل کے امکانات کے بارے میں زیادہ پر امید نہیں ہیں اور شہر چھوڑ کر گاؤں کا رخ کر رہے ہیں۔
Visitantes frente a paisaje en la provincia de Jeolla del Sur.
Getty Images

کئی دہائیوں جنوبی کوریا کا دارالحکومت سیول دنیا کے دیگر ممالک کے لیے ترقی کی ایک مثال بنا رہا ہے۔

امارت کے لحاظ سے یہ شہر دنیا کے تمام دارالحکومتوں میں پہلے نمبر پر ہے اور ایسی صنعتوں کا مرکز ہے جنھوں نے دنیا پر اپنا غلبہ قائم کیا ہے۔

اس کا مطلب یہ ہے کہ صرف سیول میٹروپولیٹن علاقہ، جس میں تقریباً ڈھائی کروڑ باشندے رہتے ہیں، جنوبی کوریا کی نصف آبادی کا گھر ہے۔

تاہم، جنوبی کوریائی باشندوں کی بڑھتی ہوئی تعداد اب ایک نئے ایڈونچر میں شامل ہو رہی ہے۔ اور وہ ہے ’کویچون‘۔

بی بی سی کی کورین سروس کے ایڈیٹر سو من ہوانگ بتاتے ہیں ’کویچون کا لفظی مطلب ہے ’شہروں سے دیہی علاقوں میں واپس لوٹنا۔‘

حالیہ برسوں میں، جنوبی کوریا کی حکومت نے دیہی علاقوں میں آبادی کی کمی اور دارالحکومت اور اس کے میٹروپولیٹن علاقے میں بڑھتی آبادی پر تشویش کا اظہار کیا ہے۔ لوگوں کو گاؤں اور کھیتوں کی جانب واپس آنے کی ترغیب دینے کے لیے مختلف حکمت عملیوں کا آغاز کیا گیا ہے۔

ایسا لگتا ہے اب اس حوالے سے کامیابی حاصل ہو رہی ہے اور جنوبی کوریا کے نوجوان دیہی زندگی کی جانب لوٹ رہے ہیں۔

وبائی بیماری بھی گاؤں واپس لوٹنے کی ایک وجہ بنی

سنہ 2021 میں بی بی سی کی کورین سروس کی صحافی جولی یونینگ لی نے جنوبی جیولا صوبے کے چھوٹے سے قصبے سنچیون کا دورہ کیا۔

Campos de té en la provincia de Jeolla del Sur.
Getty Images
جنوبی جیولا صوبہ جنوب مغربی جنوبی کوریا میں واقع ہے

وہاں ان کی ملاقات 11 سالہ یون سیہو اور ان کی والدہ اوہ سوجونگ سے ہوئی۔ گھر کے دروازے کے سامنے بہت سی سبزیاں لگی تھیں جن میں آلو، مکئی، بینگن، کالی مرچ اور سلاد کے پتے شامل تھے۔

لی کا کہنا ہے کہ ان کی زندگی پہلے سے زیادہ مختلف ہے۔

سیہو اور اس کا خاندان ایک 19 منزلہ عمارت کی نویں منزل پر رہتے تھے جو ایک زیادہ ٹریفک والے علاقے میں واقع تھا۔ کورونا وائرس کے لاک ڈاؤن سے بھی پہلے سیہو اور ان کا بھائی گھر سے باہر جگہ کی کمی کے باعث اپارٹمنٹ کے اندر بیس بال کھیلتے تھے۔

سنچیون میں منتقل ہونے کے بعد سے، ان کے فلک بوس عمارتوں والے نظارے کی جگہ پہاڑوں نے لے لی ہے، ٹریفک کے شور کی جگہ وہ مرغیوں کی آواز سُنتے ہیں، اور ان کے خاندان کے چھوٹے سے اپارٹمنٹ کی جگہ لکڑی کے روایتی مکان نے لے لی ہے جس کی چھت ترچھی اور خوبصورت ہے۔

سیہو نے بتایا ’اب میں باہر قدم رکھتا ہوں اور سب کھیل کا میدان ہے۔ میں ہر روز کالی مرچ، بینگن اور سلاد کو پانی دیتا ہوں۔‘

Sihu y su hermano jugando béisbol en Corea del Sur.
BBC
گاؤں میں منتقل ہونے کے بعد سیہو اور ان کا بھائی گھر سے باہر کھلی جگہ پر بیس بال کھیل سکتے ہیں

ملک کی نصف سے زیادہ آبادی سیئول میں رہنے کے باعث، بہت سے لوگوں کو خدشہ تھا کہ شہر کے گنجان اپارٹمنٹ بلاکس میں کووِڈ تیزی سے پھیل جائے گا۔

جب وائرس آیا تو سب سے پہلے سکول بند ہوئے۔ سیہو کے لیے تنہائی بہت مشکل تھی۔ آن لائن سکول اور اپنے دوستوں سے نہ ملنے کی وجہ سے اس کی ذہنی صحت خراب ہو گئی۔

سہو کی حالت ان کی والدہ سے دیکھی نہیں گئی۔ اس لیے انھوں نےوہ کرنے کا فیصلہ کیا جس کے بارے میں وہ سالوں سے خواب دیکھتی آئی تھیں: شہر چھوڑ کر گاؤں میں نئی زندگی کی تلاش۔

لاکھوں جنوبی کوریائی خاندان بھی ایسا ہی کر رہے ہیں۔

Sihu entrevistado por la BBC.
BBC
سیہو گاؤں کی زندگی سے بہت خوش ہیں

نوجوانوں کی ایک بہت بڑی تعداد

دیہی علاقوں اور زراعت کی طرف واپسی ایک ایسا رجحان ہے جسے حالیہ برسوں میں وبائی مرض کے بعد اور متبادل طرز زندگی تلاش کی وجہ سے فروغ حاصل ہوا ہے۔

قومی شماریات کے بیورو اور زراعت، خوراک اور دیہی امور کی وزارت کے 2021 کے سروے کے مطابق، اس سال کل 515,434 افراد نے سیئول چھوڑا اور دیہی یا ماہی گیری والے دیہات میں چلے گئے، جو کہ پچھلے سال کے مقابلے میں 4.2 فیصد زیادہ ہے۔

خاص طور پر 30 سال سے کم عمر کے 235,904 افراد دیہی علاقوں میں واپس گئے، جو کہ کل تعداد کا 45.8 فیصد ہے۔

یہ بھی پڑھیے

’بھگوان نے کہا تھا کہ کچے مکان رکھنا، پکے گھر مت بنانا‘

’بیوروکریسی اور جاگیرداروں کے گٹھ جوڑ نے میرے خواب چھین لیے‘

وبا کے دور میں امید کی کرن بننے والی پاکستانی خاتون کاشتکار کی کہانی

Vista de Seúl.
Getty Images
کئی دہائیوں تک سیول، جنوبی کوریا میں ترقی کی ایک مثال بنا رہا ہے لیکن آج بہت سے نوجوان مستقبل کے امکانات کے بارے میں زیادہ پر امید نہیں ہیں اور شہر چھوڑ کر گاؤں کا رخ کر رہے ہیں

رامون پیچیو پاردو، بین الاقوامی تعلقات کے پروفیسر اور کنگز کالج لندن میں کوریائی اور مشرقی ایشیائی امور کے ماہر بتاتے ہیں کہ ’حال ہی میں ایسا رجحان سامنے آیا ہے کہ جو نوجوان سیول میں اپنی تعلیم مکمل کرتے ہیں، کام اور آگے ترقی کے امکانات سے ناخوش ہو کر وہ واپس گاؤں جا کر اپنی قسمت آزمانے کا فیصلہ کرتے ہیں۔ اور ایسا لگتا ہے کہ بہت سے لوگ اسے پسند کر رہے ہیں۔‘

کام کے ساتھ عدم اطمینان دنیا کے دوسرے بڑے شہروں میں بھی ایک بڑا مسئلہ ہے، جیسے مکانات کی بڑھتی قیمتیں، شہری زندگی کا تناؤ، بہت زیادہ مقابلے بازی۔

جنوبی کوریا میں خودکشی کی شرح دنیا میں سب سے زیادہ ہے اور حکومتی اعدادوشمار کے مطابق یہ نوعمروں اور نوجوانوں میں موت کی سب سے بڑی وجہ ہے۔ ماہرین نفسیات نے نوجوانوں پر تعلیمی کامیابی حاصل کرنے کے لیے ڈالے جانے والے شدید دباؤ کو ڈپریشن اور خودکشی کی وجوہات قرار دیا ہے۔

کامیابی کی بات کی جائے تو بہت سے نوجوانوں کو لگتا ہے کہ انھیں ان کی محنت کا ثمر توقعات جتنا نہیں ملتا مگر اس دوران شہر انھیں اندر ہی اندر کھا رہا ہے۔

پرانے گھروں میں واپسی

20ویں صدی کے دوسرے نصف میں، جنوبی کوریا میں بہت خوشحالی اور اقتصادی ترقی دیکھی گئی۔ کئی سالوں تک اور 1940 کی دہائی میں کوریا کی شمالی اور جنوبی کوریا میں تقسیم اور اس کے بعد 1950-1953 کے درمیان خانہ جنگی سے پہلے، کوریائی باشندوں کی ایک بڑی اکثریت زراعت کے پیشے سے وابستہ تھی۔

لیکن 1960 کی دہائی سے غربت کے باعث دیہی علاقوں سے شہر کی طرف بڑے پیمانے پر نقل مکانی ہوئی۔شہری آبادی میں یہ اضافہ معاشی ترقی کے ساتھ ساتھ مواقع پیدا کرنے اور دولت بنانے میں معاون ثابت ہوا۔

تاہم، پچھلی نسلوں کے مقابلے میں آج بہت سے نوجوانوں کو وہ مواقع نہیں مل رہے۔

اس تناظر میں یہ حیرت کی بات نہیں ہے کہ سیہو جیسے بچے اور اور دیگر پیشہ ور نوجوان اپنی ملازمتیں چھوڑ کر حاندانوں سمیت ان گھروں میں لوٹ رہے ہیں جنھیں ماضی میں بہت سے کوریائی چھوڑ کر شہر چلے گئے تھے۔

دیہی زندگی کا فروغ

مختلف حکومتوں نے گریٹر سیول اور دیہی علاقوں کے درمیان آبادی اور معاشی عدم توازن کو متوازن کرنے کے طریقے تلاش کیے ہیں۔

کئی دہائیوں سے زراعت اور ماہی گیری جیسی صنعتوں میں خاطر خواہ سرمایہ کاری کی کمی نے جنوبی کوریا کے دیہی علاقوں کو معاشی زوال کا شکار بنا دیا ہے۔

پچیکو کہتے ہیں ’دیہی علاقوں میں آبادی بالکل ختم ہو رہی تھی کیونکہ نوجوان اور خاص طور پر خواتین مواقع کی تلاش میں شہر کا رخ کر رہی تھیں۔‘

جنوبی کوریا بھی دنیا میں سب سے کم شرح پیدائش والے ممالک میں سے ایک ہے، یہ اعدادوشمار دیہی علاقوں کو زیادہ متاثر کرتے ہیں۔

دیہی علاقوں میں آبادی کی کمی اس حد تک بڑھ گئی تھی کہ خوراک کے مسائل نے جنم لیا۔ بہت سے کسان جن میں سے زیادہ تر بوڑھے لوگ تھے، ریٹائر ہونے لگے یا وفات پا گئے اور ان کی جگہ لینے کو نوجوانوں موجود ہی نہیں تھے۔

یہی وجہ ہے کہ حکام ان شہریوں کو سہولیات دے رہے ہیں جو نقل مکانی کرنا چاہتے ہیں۔

کنگز کالج کے ماہر کا کہنا ہے کہ ’حکومت دیہی علاقوں میں زندگی سے متعلق تربیتی اور تعلیمی پروگراموں کو فروغ دیتی ہے۔ فصل کاٹنا سیکھنے کے پروگرام ہیں اور کچھ مقامی حکومتیں معاشی امداد اور رہائش تک رسائی کی پیشکش کرتی ہیں۔‘

Plantaciones de arroz en Corea del Sur.
Getty Images
بہت سے کسان جن میں سے زیادہ تر بوڑھے لوگ تھے، ریٹائر ہونے لگے یا وفات پا گئے اور ان کی جگہ لینے کو نوجوانوں موجود ہی نہیں تھے

بالواسطہ امداد جیسا کہ انفراسٹرکچر میں زیادہ سرمایہ کاری بھی کیچون کے فروغ کا سبب ہے۔

پچیکو کہتے ہیں ’ایک چھوٹے سے ملک میں لوگ نئے انفراسٹرکچر کی بدولت سستے طریقے سے نقل و حرکت کر سکتے ہیں، یہی چیز زیادہ لوگوں کو زندگی کی اس تبدیلی پر غور کرنے میں مددگار ہے۔‘

نئی نسل پر اثرات

کویچون کے بارے میں مثبت رجحان اور اس میں تیزی کو دیکھتے ہوئے، اس کے اثرات کا اندازہ لگانا ابھی بھی جلد بازی لگتا ہے۔

مثال کے طور پر کووڈ کے وبائی مرض سے پہلے بہت سے دیہی سکول بند ہونے کے دہانے پر تھے۔

جب بی بی سی نے 2021 میں سنچیون کا دورہ کیا تو انھوں نے سیہو کے سکول کی ٹیچر شن ینگمی کا انٹرویو کیا۔

ینگمی پہلے سیول میں پڑھاتی تھیں اور دیہی علاقوں میں اپنے تجربے کے بعد ان کا خیال ہے کہ دیہی سکول کوریائی باشندوں کے لیے نوجوانوں میں پائے جانے والے ڈپریشن اور افسردگی سے نمٹنے کا حقیقی موقع فراہم کر سکتے ہیں۔

Shin Youngmi.
BBC
ینگمی پہلے سیول میں پڑھاتی تھیں

دیہی سکولوں کی مدد کے لیے حکام نے ان خاندانوں کو بھی سبسڈی کی پیشکش کی جو سیول چھوڑنے کے لیے تیار ہیں۔

اس سال، سیہو کے سکول میں سات نئے طالب علم داخل ہوئے اور ٹیچرینگمی کا کہنا ہے کہ پوری کمیونٹی کو ان نئے آنے والوں سے فائدہ ہوا ہے۔

یہ دیکھنا باقی ہے کہ آیا دیہی نقل مکانی کرنے والوں کی یہ نوجوان نسل گاؤں کی زندگی میں خوش رہتی ہے یا پھر شہر کی ہلچل انھیں واپس کھینچ لے گی۔


News Source   News Source Text

BBC
مزید خبریں
سائنس اور ٹیکنالوجی
مزید خبریں

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.