آنکھوں میں میں غم کو چھپائے پھرتا ہوں

Poet: داد بلوچ فورٹ منرو
By: Dad Baloch, DG khan

آنکھوں میں میں غم کو چھپائے پھرتا ہوں
زیست کی گٹھری سر پہ اٹھائے پھرتا ہوں

اس کے لب و رخسار کو روشن رکھنا ہے
جس کی خاطر دل کو جلائے پھرتا ہوں

اس کو دوں الزام جفا کا یا بے درد زمانے کو
ان سوچوں میں ذہن الجھائے پھرتا ہوں

بارش ہو کہ آندھی سب کچھ سہتا ہوں
فرسودہ رسموں کاسر پر بوجھ اٹھائے پھرتا ہوں

چاندنی راتیں دادؔ پہاڑوں پر گھوموں
چاند چکور کا ربط بڑھا ئے پھرتا ہوں

Rate it:
01 Apr, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Dad Baloch
Visit 15 Other Poetries by Dad Baloch »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City