آنکھیں دیکھنے والی ہیں

Poet: Syed Farrukh Imdad
By: Syed Farrukh Imdad, Lahore

آنکھیں دیکھنے والی ہیں
یہ دل میں چبھنے والی ہیں

گال بھی ہیں گلابی سے
ادائیں مارنے والی ہیں

گیلے گیسو لگتے ہیں یوں
جیسے گھٹائیں برسنے والی ہے

آنکھوں کی چمک سےایسے لگے
کہ بجلیاں گرنے والی ہیں

میٹھی سی آواز میں اسکی
باتیں سننے والی ہیں

اسکی تو یہ انگلیاں بھی
لوگوں کو نچانے والی ہیں

اسکے حسین ہاتھوں کی لکیریں
میرے ہاتھ سے ملنے والی ہیں

دیکھ کے اسکے حسن کو آج
یہ آنکھیں جلنے والی ہیں

اسکے سانسوں کی خوشبو سے
یہ کلیاں مہکنے والی ہیں

چلو جھک جاوء سب پریو
وہ تخت پہ آنے والی ہیں

فرخ کی فریاد کو پڑھ کے
وہ حکم سنانے والی ہیں

Rate it:
28 Aug, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Syed Farrukh Imdad
Visit 12 Other Poetries by Syed Farrukh Imdad »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City