آہٹ سی ہوئ تھی نہ کوئ برگ ہلا تھا

Poet: مرید باقر انصاری
By: مرید باقر انصاری, Karachi

آہٹ سی ہوئ تھی نہ کوئ برگ ہلا تھا
چپکے سے وہ اک رات مجھے چھوڑ گیا تھا

پتھر سے بھی اب سخت سا لہجہ ہے اسی کا
جو شخص مجھے آئنہ رو بن کے ملا تھا

اب نام اسی شخص کا دل سن کے نہ روۓ
کل جس کی حمایت میں بہت بول رہا تھا

میں پیار کی ہر حد سے گزر جاتا تھا اکثر
اس شخص کو بس مجھ سے یہی ایک گلا تھا

جس پھول کی خوشبو مری قسمت میں نہیں تھی
کیونکر مرے آنگن میں وہی پھول کھلا تھا

میں کوئ بھی آوارہ شرابی نہیں لوگو
بس یونہی کسی یاد میں مدہوش پڑا تھا

نکلا غم دنیا سے تو آ ہجر نے گھیرا
یہ روگ بھی باقرؔ مری قسمت میں لکھا تھا
 

Rate it:
13 May, 2016

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: مرید باقر انصاری
Visit 213 Other Poetries by مرید باقر انصاری »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City