آہ بندش میں ہے، پابند ہوں نالے کب تک

Poet: AzharM
By: AzharM, Doha

آہ بندش میں ہے، پابند ہوں نالے کب تک
مُجھ سا کوئی بھی ہو اب درد کو پالے کب تک

روشنی پھر سے کسی درز سے در آئی ہے
روک پایا بھی تو روکوں گا اُجالے کب تک

درد رُخصت ہوا کب کا تری رہ میں، دیکھیں
ساتھ دیتے ہیں مرا پاؤں کے چھالے کب تک

چشم جمہور میں طوفان ہے برپا جیسے
اب پڑے رہتے ہیں ہونٹوں پہ یہ تالے کب تک

سال خوردہ ہیں ترے خط، انہیں لے جا آ کر
کوئی آخر یہ امانت بھی سنبھالے کب تک

اپنی مرضی سے ہو اک بار رواں نرم وجود
اُس کی خواہش پہ کوئی خود کو بھی ڈھالے کب تک

دیکھتا رہ تُو بھی چُپ چاپ کہ آخر اظہر
بھول پاتے ہیں تُجھے بھولنے والے کب تک

Rate it:
10 Apr, 2015

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: azharm
Simply another mazdoor in the Gulf looking 4 daily wages .. View More
Visit 179 Other Poetries by azharm »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City