اب ضروری نہیں محبت ہو

Poet: عمیر قریشی
By: عمیر قریشی, اسلام آباد

چین دل کا نظر کی راحت ہو
میرا سرمایہ میری دولت ہو

عشق کی کس طرح ضمانت دے
جس کی دیوانگی کی حالت ہو

مجھ سے مجنوں کو دشت الفت میں
دیکھ کر قیس کو بھی حیرت ہو

بات ان سے کریں گے ہم جن سے
گفتگو کی بھی ایک لذّت ہو

ہجر میں کٹ گئی ہے عمر تمام
زندگی اب تو کچھ رعایت ہو

میں نے دل کی نظر سے دیکھا تب
تم کو جانا کہ خوب سیرت ہو

چشم و لب ہیں تمہارے میرا نصاب
میرے شعروں میں تم روایت ہو

بات مجھ سے بھی تلخ لہجے میں
اب نہ اتنی بھی بے مروّت ہو

میرا اخلاص یوں نہ ٹھکراؤ
کل نہ تم کو کہیں ندامت ہو

اب نظر کو ذرا نہیں بھاتا
روپ کتنا بھی خوبصورت ہو

داستاں ختم ہوگئی آخر
اب ضروری نہیں محبّت ہو

Rate it:
21 Apr, 2015

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: عمیر قریشی
Visit 22 Other Poetries by عمیر قریشی »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City