اُنہیں اِک اور مہلت چاہیے ہے

Poet: Mahmood hussain Aakif
By: Mahmood hussain Aakif, Sialkot

اُنہیں اک اور مہلت چاہیے ہے
ہمیں بھی تو محبت چاہیے ہے

وصال و ہجر بھی اچھے ہیں لیکن
دلِ بسمل کو راحت چاہیے ہے

فقط ناراضگی کافی نہیں ہے؟
کہ گاؤں سے بھی ہجرت چاہیے ہے

لبادہ بے حسی کا اوڑھ لو پر
نگاہوں میں بھی نفرت چاہیے ہے

مری میت کو تم کندھا نہ دینا
ترے ماتھے یہ ذلت چاہیے ہے

بڑی حیرت ہے دشمن کو بھی ہم سے
عنایت پر عنایت چاہیے ہے

یہ تسبیح عشق کی تسبیح ہے عاکفؔ
عبادت میں بھی شدت چاہیے ہے

Rate it:
03 Sep, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Mahmood hussain Aakif
Visit Other Poetries by Mahmood hussain Aakif »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City