بن کے ہجرت کے کئی خواب نکل آتے ہیں

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, Kuala Lampur

بن کے ہجرت کے کئی خواب نکل آتے ہیں
درد آنکھوں کے تہہِ آب نکل آتے ہیں

کب سے آنکھوں میں چھپے بیٹھے ہیں آنسو بن کر
آپ کہتے ہیں جو آداب ، نکل آتے ہیں

آج مر مر کے دکھائیں گے تجھے ، دیکھ ذرا
زندہ رہنے کے تو اسباب نکل آتے ہیں

پھر کسی روز محبت سے بلاؤ ہم کو
تیرے کوچے سے ہی بیتاب نکل آتے ہیں

تیری خواہش کے سرابوں میں کٹی ایسے حیات
اب تو سوچوں میں بھی گرداب نکل آتے ہیں

اپنے دشمن پہ کیا میں نے بھروسہ وشمہ
َ"بعض پتھر بڑے نایاب نکل آتے ہیں"

Rate it:
16 Dec, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: وشمہ خان وشمہ
Visit Other Poetries by وشمہ خان وشمہ »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City