تم بہت یاد آئے

Poet: Farah Ejaz
By: Farah Ejaz, Karachi

کوشش تو بہت کی بھول جانے کی پر
ہر موڑ پر ہی تم بہت یاد آئے

تم سے دور جانے کا فیصلہ بھی اپنا تھا
مگر دور ہو کر بھی تم بہت یاد آئے

جو کہہ نہ سکے تم سے کبھی
وہی سنا نا تھا شایداس لئے تم بہت یاد آئے

محبت کے بھی عجب رنگ ڈھنگ ہوتے ہیں
کتاب الفت کو پڑھتے ہوئے تم بہت یاد آئے

جان کر بھی انجان بن گئے تھے ہم
وہی دل کی بات جان کر تم بہت یاد آئے

جو سلسلاسی سا تعلق تھا درمیان ہمارے
اسی کے ٹوٹنے پر تم بہت یاد آئے

شاید یہی انجام ہونا تھا ہماری محبت کا
اس لئے تم ہمیں بہت یاد آئے

Rate it:
26 Aug, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: farah ejaz
My name is Farah Ejaz. I love to read and write novels and articles. Basically, I am from Karachi, but I live in the United States. .. View More
Visit 151 Other Poetries by farah ejaz »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City