حناٸی دستِ نازک میں تو دیکھو زور کی صورت

Poet: Syed Iftikhar Ahmed Rashk
By: Syed Iftikhar Ahmed Rashk, Karachi

حناٸی دستِ نازک میں تو دیکھو زور کی صورت
شکستہ دل کیا اس پر نہ چھوڑی شور کی صورت

نہیں خاطر میں لاٸے آرزوٸے عاجزانہ کو
قدم سے روند کے کوٸی نہ رکھی غور کی صورت

سہے ہنس ہنس کے، نہ کوٸی گلہ یوں بھی کیا جاناںؔ
تری صورت حسیں کتنی ہے ظلم و جَور کی صورت

چُراکے دل چُرالی ہے نظر، میرا نہیں دعویٰ
مگر محفل میں خود کترا گٸے ہو چور کی صورت

سنا ہے ہم نے کہ تاریخ دہراتی ہے اپنے کو
جو یوں ہے تو دکھادے پھر پرانے دور کی صورت

مسافر کو سراٸے عام نہ منزل دکھاٸی دے
سجاٸے رکھتا ہوں آنکھوں میں اپنی گور کی صورت

جُڑا ہے رشکؔ تارِ عشق سے مثلِ نگیں گوہر
بظاہر درمیاں کوٸی نہیں ہے ڈور کی صورت

Rate it:
20 Sep, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Syed Iftikhar Ahmed Rashk
Visit 10 Other Poetries by Syed Iftikhar Ahmed Rashk »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City