دیر سویر تو ہو جاتی ہے

Poet: الماس شبی
By: Almas Shabi, El Paso TX

دروازے پر جو آنکھیں ہیں
اُن آنکھوں میں جو سپنے ہیں
اُن سپنوں میں جو مورت ہے
وہ میری ہے
دروازے کے باہر کیا ہے ؟
اک رستہ ہے

جس پر میری یادوں کا اک شہر بسا ہے
میرا رستہ دیکھنے والی اُن آنکھوں کا جال بچھا ہے
مجھے پتہ ہے

لیکن اُن آنکھوں کو کیسے میں یہ بات بتاؤں
ہر رستے پر اتنی بھیڑ کہ چلنا مشکل ہو جاتا ہے
آوازوں کے اس جنگل سے بچنا مشکل ہو جاتا ہے
دکھ کا ایسا لمحہ آتا ہے جب ہنسنا بھی مشکل تر ہو جاتا ہے

جب ایسے حالات کھڑے ہوں
قدموں میں زنجیر کی صورت
روشنیوں کے سائے پڑے ہوں
ایسے میں دل اُن آنکھوں سے
ایک ہی بات کہے جاتا ہے
دیر سویر تو ہو جاتی ہے
 

Rate it:
02 Sep, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Almas Shabi
Visit 6 Other Poetries by Almas Shabi »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City